Create an Account

دنیا نے کئی وباؤں کا مشاہدہ کیا ہے، جن میں سے کورونا صرف ایک ہے۔ ہماری دنیا نے ہر طرح کے صورت حالات دیکھی ہے اور وہ انسانیت کے تمام خوشی غمی پر گواہ ہے، انفرادی سطح پر بھی اور اجتماعی سطح پر بھی۔
زمین اور آسمان اپنے حدود میں بسنے والوں کے تمام رنج اور سرور میں ان کے ساتھ شریک ہے۔ ہماری طرح وہ بھی اللہ کی مخلوق ہیں اس لئے ان کو ہمارے جذبات کا احساس ہوتا ہے، بلکہ ہر صالح جاندار سے ان کا ایک قریبی تعلق بھی پیدا ہوتا ہے۔ آپ صلى الله عليه وسلم نے فرمایا: “جب کوئی مؤمن تنہائی میں مرتا ہے جبکہ اس کے لئے کوئی رونے والا نہ ہو تو زمین اور آسمان اس کے لئے روتے ہیں۔” (تفسیر طبری) اس کے برعکس وہ ہر اس شخص سے نفرت رکھتے ہیں جو ظلم وفساد برپا کرتا ہو، اسی لئے جب فرعون اور اس کا لشکر سمندر میں ڈوب گئے تو “نہ ان پر آسمان رویا نہ زمین” (الدخان: 29) بلکہ ان سے چھٹکارا پانے پر وہ خوش تھے۔
ہماری یہ زمین ان تمام واقعات پر شاہد ہے جو اس کی سطح پر واقع ہورہے ہیں۔ اور ایک دن آئیگا جب وہ “اپنی ساری خبریں بتادے گی۔” (الزلزال: 4) اور ہر اچھائی اور برائی کی گواہی دے گی جو اس کے سامنے ہوئی۔ اسی لئے علی رضی اللہ عنہ بیت المال کو خالی کرنے کے بعد زمین کو مخاطب کرکے کہتے تھے کہ تم گواہ رہنا (قیامت کے دن) کہ میں نے تمہیں صرف حق کے ساتھ بھرا اور حق کے ساتھ خالی کیا۔
آج ہماری یہ دنیا دیکھ رہی ہے کہ کورونا کس طرح کڑوڑوں انسانوں کی زندگیوں کو متاثر کررہی ہے۔ مگر وہ صرف یہی نہیں دیکھ رہی، بلکہ وہ ساتھ ساتھ ہمارے رد عمل بھی دیکھ رہی ہے۔ وہ یہ دیکھ رہی ہے کہ کون کورونا کے دیے گئے مواقع سے فائدہ اٹھا رہا ہے اور کون نہیں اٹھا رہا، اور کس طرح کورونا ہمارے بہترین اور بدترین پہلوؤں کو سامنے لارہا ہے۔ وہ ہم سے بہتر جانتی ہے کہ یہ وباء کس کے لئے سزا، نعمت، نشانی یا غور وفکر کا وقت ہے، اس لیے کہ اس کو معلوم ہے کہ ہم میں سے ہر ایک اس سے پہلے کیا کررہا تھا۔
اور، ممکن ہے، کہ زمین اور آسمان اس امید سے بھی ہوں کہ شاید یہ افتاد انسانوں کو اپنے خالق کی طرف لوٹادے۔ تاکہ جس طرح خالق کے قوانین پر چلنے کی وجہ سے پچھلے ہزاروں سال سے نظام کائنات سکون کے ساتھ چل رہا ہے۔ اسی طرح انسان بھی اللہ کے احکام پر چل کر دنیا اور آخرت کا قرار پالے۔
الله سے دعا ہے کہ قیامت کے دن زمین اور آسمان ان تمام مثبت تبدیلیوں کی گواہی دے جو کورونا ہم میں لائی ہے، اور ابھی لانے کو ہے ان شاء اللہ۔

Back to Top